top of page
  • Writer's pictureMaulana Mohammad Gayasuddin Ashrafi

تربیتِ اولاد میں ماں کا کردار اور اس کی ذمہ داریاں

Updated: Dec 20, 2023

از :مولانامحمد غیاث الدین اشرفی

(فاضل ادارہ اشرف العلوم ، حیدرآباد ،انڈیا)


الحمد للہ و کفی  و سلام علی  عبادہ الذین اصطفی   اما  بعد


۱۔انسان  کا مقصد زندگی:

          جب  ہم  یہ  بلند  و بالا پہاڑ ، وسیع  و   عریض  آسمان  ،                 لہلہاتے   کھیت ، مختلف   جانور  اور پرندے  دیکھتے  ہیں   تو  ہمارے اندر  یہ سوال پیدا ہوتا ہے  کہ اللہ تعالٰی   نے  یہ تمام  چیزیں  کیوں  پیدا   کی  ہیں ، آخر  کیوں  کائنات  کا  کاروبار  جاری  ہے ، اس  کا جواب  اللہ تعالیٰ  نے    یہ پوری  کائنات    حضرتِ انسان  کے  لیے  پیدا  کی  ہے۔

  اللہ تعالیٰ  قرانِ  مجید  میں  ارشاد  فرماتے  ہیں:

هُوَ ٱلَّذِى خَلَقَ لَكُم مَّا فِى ٱلْأَرْضِ جَمِيعًا  (بقرہ :۲۹)

ترجمہ : ’’وہی ہے جس نے جو کچھ زمین میں ہے سب تمہارے لئے بنایا‘‘

’’نہ تو   زمیں کے لیے ہے نہ  آسماں کے لیے

جہاں ہے تیرے لیے تو نہیں جہاں کے لیے  ‘‘

معلوم  ہوا  کہ اللہ تعالیٰ  نے  یہ ساری  کائنات  انسان  کے  لیے   بنائی  ہے  ، تو  اب سوال  پیدا  ہوتا  ہے کہ اللہ تعالیٰ  نی انسانوں  کو  کیوں  پیدا  فرمایا، اس  سوال  کا   جواب  دیتے  ہوئے   اللہ  تعالیٰ قران ِ  مجید  میں ارشاد  فرماتے  ہیں :

وَ مَا خَلَقْتُ الْجِنَّ وَ الْاِنْسَ اِلَّا لِیَعْبُدُوْنِ O (ذاریات :56)

ترجمہ : ’’اور میں نے جن اور آدمی اسی لئے بنائے کہ میری عبادت کریں‘‘

ایک  اور   جگہ  پر  ارشاد   فرمایا

الَّذِیْ خَلَقَ الْمَوْتَ وَ الْحَیٰوةَ لِیَبْلُوَكُمْ اَیُّكُمْ اَحْسَنُ عَمَلًاؕ-وَ هُوَ الْعَزِیْزُ الْغَفُوْرُ O (ملک:2)           

ترجمہ :                                                          ’’وہی   ہے جس نے موت اور زندگی کو پیدا کیا تاکہ تمہاری آزمائش کرے کہ تم میں کون زیادہ اچھے عمل کرنے والا ہے اور وہی بہت عزت والا،بہت بخشش والا ہے۔‘‘

   اللہ  تعالیٰ   نے   دنیا   کو  انسان  کے  لیے  اور  انسان  کو  اپنے  لیے  پیدا   فرمایا،  شاعر  کہتا  ہے:

’’جانور                                                                                                        پیدا کئے ہیں تیری وفا کے واسطے

چاند                                                                                  سورج اور ستاروں کو ضیا کے                                                                                                                            واسطے

کھیتیاں                                                                                                                       سرسبز ہیں                                      تیری                                                                                                          غذا کے واسطے

یہ جہاں تیرے لئے ہے اور تُو خُدا کے واسطے‘‘


ہم  خیر  امت  ہیں:

                                                                                                                                ہماری  ایک  حیثیت  تو  یہ  ہے  کہ ہم  اللہ  کہ بندے  ہیں ، ایمان  والے  ہیں  ، اس حیثیت  میں  دیگر  انبیاء  علیھم السلام  کی امتیں   ہماری  شریک  ہیں۔ اس  حیثیت  کے  علاوہ  ہماری  ایک اور  حیثیت   ہے  وہ  یہ  کہ  ہم اللہ تعالٰی  کے آخری  نبی حضرت محمد  ﷺ   کی  امت  ہیں۔قرآن  نے  ہمارا  نام   خیر ِ امت  رکھا  ہے ،  کہیں  ہم  کو  امتِ وسط  کہا  ہے ۔  کہیں  ہم  شھداء  علی  الناس  کا  منصب  عطا  کیا    ہے۔

          اللہ  تعالیٰ  کے  بندے  ہونی  کی حیثیت  سے  ہمارا  یہ فرض  ہے  کہ ہم اس  ہی  کی عبادت  کریں ، اور  ہر  کام  میں اس  کی اطاعت  کریں ، اسی طرح  خاتم  النبین ﷺ  کی امت  ہونے  کی حیثیت  سے  یہ ہماری  ذمہ داری  ہے  کہ ہم خیرِ امت اور  شہداء  علی  الناس    کا فریضہ  انجام  دیں۔


خیرِ امت  کی کیا ذمہ داریاں  ہیں؟اس  امت  کو  کیوں  برپا  کیا گیا  ہے؟

          اللہ تعالیٰ   قرآن ِ  مجید  میں امتِ  مسلمہ  کی خصوصیت  اور اس  کی ذمہ داریوں  کو  بیان  کرتے ہوئے ارشاد فرماتے   ہیں:

كُنْتُمْ  خَیْرَ  اُمَّةٍ  اُخْرِجَتْ  لِلنَّاسِ   تَاْمُرُوْنَ  بِالْمَعْرُوْفِ  وَ  تَنْهَوْنَ  عَنِ  الْمُنْكَرِ  وَ  تُؤْمِنُوْنَ  بِاللّٰهِؕ-       )  آل عمران:110)

ترجمہ:’’  (اے مسلمانو!) تم بہترین امت ہو جو لوگوں (کی ہدایت ) کے لئے ظاہر کی گئی، تم بھلائی کا حکم دیتے ہو اور برائی سے منع کرتے ہو اور اللہ پر ایمان رکھتے ہو‘‘

          اس آیت  سے معلوم  ہوتا  ہے  کہ  یہ امت  خیرِامت  اس لیے  ہے  کیوں کہ اس  کو  انبیاء  علیھم السلام   کا کام  عطا  کیا گیا  ہے  ، وہ کام ہے معروف   کی  دعوت  دیااور  منکر   سے    روکنا۔

          مسلمان خیرِ امت  ہیں ان  کی  ذمہ داری خود  تک  محدود  نہیں  ہوسکتی ، وہ’’   اُخْرِجَتْ لِلنَّاس‘‘ ہیں  ، سارے انسانوں   کے  لیے  ذمہ دار  ہیں۔   ’’قَوَّامِیْنَ  بِالْقِسْط‘‘  ہیں، اللہ  کے  ہر  بندے  کوعدل و  انصاف  فراہم  کرنا  ان  کا  مشن  ہے۔


مقصد  کے حاصل  کرنے  میں علم  اور  تربیت ضروری:

        انسانوں  کو  کسی  بھی  مقصد  کے  حاصل  کرنے  کے لیے  علم  اور  تربیت  کی ضرورت  ہوتی  ہے ، اس  لیے  کہ انسان  اپنی  ماں  کے  پیٹ  سے اس  حال  میں پیدا  ہوتا   ہے کہ اس  کو  کسی  چیز  کا علم  نہیں ہوتا۔قرآنِ  مجید اس  حقیقت  سے پردہ اٹھاتے ہوئے  کہتا  ہے:

وَ اللّٰهُ اَخْرَجَكُمْ مِّنْۢ بُطُوْنِ اُمَّهٰتِكُمْ لَا تَعْلَمُوْنَ شَیْــٴًـاۙ         -وَّ جَعَلَ لَكُمُ السَّمْعَ وَ الْاَبْصَارَ وَ الْاَفْـٕدَةَۙ        -لَعَلَّكُمْ تَشْكُرُوْنَ O( النحل : (78

ترجمہ : ’’اور اللہ نے تمہیں تمہاری ماؤں کے پیٹوں سے اس حال میں پیدا کیا کہ تم کچھ نہ جانتے تھے اور اس نے تمہارے کان اور آنکھیں اور دل بنائے تاکہ تم(اپنے  پیدائشی  جہالت کو  دور  کرکے) شکر گزار بنو۔‘‘

          تعلیم  و  تربیت  میں  سب  سے اہم  کردار  والدین  عطا  کرتے  ہیں ، انسان  تو  انسان  جانور  بھی  اپنے  بچوں  کی تربیت  کرتے  ہیں۔ایک چڑیا  اپنے  بچوں  کو اڑنے  کی تربیت دیتی  ہے ،ایک شیر  اپنے  بچے  کو  شکار  سکھاتا  ہے۔انسان  اشرف  المخلوقات  ہے ، اس  کا  کام  بس  اتنا  نہیں کہ وہ   اپنی  اولاد  کی  جسمانی تربیت  کردے  بلکہ  یہ  والدین  کی ذمہ داری  ہے  کہ وہ اپنے  بچوں  کی دینی  اور  روحانی  تربیت  کریں ۔بچے  والدین  کے پاس  اللہ  تعالیٰ  کی امانت  ہیں  اور  ان  کی تربیت  ماں  باپ  کی ذمہ داری  ہے  ان  سے قیامت  میں اس ذمہ داری  کے  بارے  میں پوچھا  جائے  گا۔اللہ کے  نبی ﷺ   کا ارشادِ مبارک  ہے :

’’کُلُّکُمْ رَاعٍ  وَ کُلُّکُمْ مَسْئُوْلٌ عَنْ رَعِیَّتِہٖ‘‘(بخاری و مسلم)

ترجمہ :  تم  میں  سے ہر  ایک  ذمہ دار  ہے اور  تم  سے تمہاری  ذمہ داری  کے  بارے  میں سوال کیا جائے  گا۔

          اولاد  کی تربیت   ماں  باپ  دونوں کی ذ مہ  داری  ہے ، لیکن ماں  کی  اس  سلسلے میں اہم ذمہ داری  ہوتی    ہے  کیونکہ وہ اپنی  اولاد  کے  ساتھ  زیادہ وقت  گزارتی  ہے  اور  اولاد  کا تعلق  باپ  سے  زیادہ  اپنی  ماں   سے  ہوتا  ہے، ماں  میں شفقت  اور  محبت  باپ  کے مقابلے  میں  زیادہ  ہوتی  ہے  اس  لیے اولاد  بھی اس   سے زیادہ  ،مانوس  ہوتی  ہے۔


ماں  کا  مقام  اسلام  میں:

          اللہ تعالیٰ اور  اس  کے  رسول  ﷺ  نے  ماں  کا بڑا  مقام  و  مرتبہ  ارشاد  فرمایا  ہے  اور  اولاد  کو  اس  کے  ساتھ  خاص  طور  سے  حسنِ  سلوک کی تاکید  کی ہے۔ماں  باپ  کے  مقام  و  مرتبہ  کو  سمجھنے   کے  لیے اتنا  کافی  ہے  کہ اللہ تعالیٰ  نے اپنی توحید  کے  حکم  کے ساتھ  ان  کے  ساتھ  حسن  سلوک کا حکم  دیا   ہے۔اللہ تعالیٰ کا ارشاد  ہے :

وَ قَضٰى رَبُّكَ اَلَّا تَعْبُدُوْۤا اِلَّاۤ اِیَّاهُ وَ بِالْوَالِدَیْنِ اِحْسَانًاؕ-  )بنی اسرائیل :۲۳)

ترجمہ:’’ اور تمہارے رب نے حکم فرمایا کہ اس کے سوا کسی کی عبادت نہ کرو اور ماں باپ کے ساتھ اچھا سلوک کرو۔  ‘‘

ماں  باپ   دونوں  کے ساتھ حسن سلوک کا اولاد  کو حکم  دیا  گیا  ہے   لیکن ماں  کو  باپ  سے  تین  گنا  زیادہ  خدمت کی مستحق  قرار دیا گیا ہے ۔

حضرت ابوہریرہؓ سے مروی صحیح حدیث میں ہے کہ ایک شخص نے رسول اللہﷺ کی خدمت میں حاضرہوکر عرض کیا:

’’مَنْ أَحَقُّ النَّاسِ بِحُسْنِ صَحَابَتِي قَالَ أُمُّكَ قَالَ ثُمَّ مَنْ قَالَ ثُمَّ أُمُّكَ قَالَ ثُمَّ مَنْ قَالَ ثُمَّ أُمُّكَ قَالَ ثُمَّ مَنْ قَالَ ثُمَّ أَبُوكَ ‘‘                             (صحیح بخاری:5971صحیح مسلم:2548)

’’ترجمہ :میرے حسن صحبت کا سب سے زیادہ حق دار کون ہے؟ آپ نے فرمایا:تیری ماں۔اس نے عرض کیا :پھر کون؟ آپ نے فرمایا:تیری ماں۔ اس نے عرض کیا :پھر کون؟ آپ نے فرمایا:تیری ماں۔اس نے عرض کیا:پھر کون؟ آپ نے فرمایا: تیرا باپ۔‘‘ 

اللہ کے  نبی ﷺ  نے  ایک صحابی   کو ماں  کی خدمت  کا حکم دیتے ہوئے ارشاد  فرمایا:

فَالْزِمْھَا فَاِنَّ الْجَنَّۃَ تَحْتَ رِجْلَیْھَا  ) رواه النسائي 3104(

  ”ان کی خدمت میں لگ جا بے شک جنت ماں کے قدموں تلے ہے۔“


ماں  کو  یہ مقام  کیوں ملا:

یہاں ایک  سوال  ہمارے  ذہن  میں  آنا چاہیے  کہ ماں  کو  یہ مقام  کیوں  دیا گیا ۔ایک  وجہ  تو  یہ  ہے  کہ ماں اپنی اولاد کی پیدائش  میں اور ان کی جسمانی تربیت  میں  بہت  تکلیفیں اٹھاتی  ہے، ماں  کی تکالیف  کا ذکر  کرتے  ہوئے  اللہ تعالیٰ ارشاد فرماتے ہیں:

          وَ وَصَّیۡنَا الۡاِنۡسَانَ بِوَالِدَیۡہِ اِحۡسٰنًا ؕ      حَمَلَتۡہُ اُمُّہٗ کُرۡھًا وَّ وَضَعَتۡہُ کُرۡھًا ؕ    وَ حَمۡلُہٗ وَ فِصٰلُہٗ ثَلٰثُوۡنَ شَہۡرًا( سورہ احقاف:15)

ترجمہ :’’اور ہم نے آدمی کو حکم دیا کہ اپنے ماں باپ سے بھلائی کرے، ا س کی ماں نے اسے پیٹ میں مشقت سے رکھا اور مشقت سے اس کوجنا اور اس کے حمل اور اس کے دودھ چھڑانے کی مدت تیس مہینے ہے‘‘

دوسری  وجہ  یہ  ہے  کہ ماں اپنی اولاد  کی تربیت  میں بھی بہت  اہم  کردار  ادا کرتی  ہے ۔ اولاد کی پرورش اور ان کی تعلیم وتربیت کی ذمہ داری  اگرچہ ماں او رباپ دونوں پرعائد ہے۔ یہ دونوں گاڑی کے دوپہیوں کا کردار اداکرتے ہیں۔ گاڑی کے  دونوں پہیے جب سائزمیں یکساں ہوں۔ دونوں کا بیلنس ٹھیک ہو۔ دونوں میں ہواپوری ہو۔ اوردونوں اپنی اپنی جگہ درست کام کررہے ہوں۔ تو گاڑی اسپیڈ سے چل سکتی ہے۔

اگردونوں میں سے کسی ایک میں فالٹ ہو۔ سائز میں فرق ہوجائے۔ کسی ایک میں ہوا کم یا زیادہ ہو۔ یا کوئی ایک ٹائر پنکچر ہوا ہو۔ تو گاڑی کو جھٹکے لگ سکتے ہیں۔ کوئی دوسرا نقصان ہوسکتا ہے۔ اور گاڑی کو خدانخواستہ حادثہ بھی ہوسکتا ہے۔بالکل اسی طرح خاندان کی گاڑی جس کی سواری خود اپنی اولاد ہو۔ اس کے دونوں طرف کے پہیوں یعنی ماں باپ کے کرداروں میں توازن ہونابہت ضروری ہے۔ ان میں سے ہر ایک کو اپنے اپنے حصے کی ذمہ داری پوری کرنی چاہیے ۔

لیکن اسلام نے ماں کو جو اضافی حیثیت دی ہے۔ او ر جنت اس کے قدموں تلے رکھ دی ہے۔ اس اعزاز کی بنیادی وجہ تربیت اولاد کے حوالے سے ماں کی وہ خصوصی ذمہ داریاں ہیں جو شاید باپ پر عائد نہیں اور نہ وہ ان کا متحمل ہوسکتا ہے۔

ماں کی یہ ذمہ داریاں صبرآزما ضرور ہیں۔ کہ  اولاد کی پرورش اور تربیت میں ماں کوبہت زیادہ کردار اداکرنا پڑتا ہے۔ تاہم اس کے حقوق بھی زیادہ ہیں۔   ہرماں کو چاہیے کہ اپنی ان ذمہ داریوں کو سمجھے ۔ان کا احساس کرے ۔اور زندگی میں اپنے کردار کو واضح اور متعین طور پر سمجھ کر زندگی گزارے اور اپنے فرائض کی تکمیل کی پوری کوشش کرے۔ 



زندگی گزارنے کی تربیت  کے ساتھ دینی اور مقصدِزندگی تربیت:

          ماں  باپ  کے اوپر  اولاد  کی تربیت  کی جو ذ مہ داری  ہے  اس  کو صحیح  طریقے  سے انجام  دینے کے لیے ضروری  ہے کہ ہم تربیت  کی قِسموں  سے  واقف  ہوں۔

.1جسمانی  تربیت: ماں باپ  کی  یہ ذمہ داری  ہے  کہ وہ اپنی اولاد  کی جسمانی تربیت  کا اہتمام کریں، جسمانی تربیت  سے مراد  اولاد  کو صحیح غذا دیں، ان  کی جسمانی نشو نما کا خیال  کریں۔


.2زندگی گزارنے  کی تربیت: ماں باپ کی یہ ذمہ داری  ہے کہ وہ اپنی اولاد  کو  زندگی گزارنے کی تربیت  دیں ، لڑکوں  کو  کمانے  کے  قابل  بنائیں،گھر  کی ذمہ داریاں  پوری  کرنے  کی تربیت  دیں اور لڑکیوں  کو گھر چلانے  اور  اولاد  کی تربیت  کی تربیت    دیں۔

          یہ  دو کام  دنیا   کے  ہر  ماں  باپ  اپنی ذمہ  داری  اور اپنی اولاد  کا حق  سمجھتے  ہیں ۔ ایک  مسلمان ماں باپ  کی ذمہ  داری یہیں  تک ختم  نہیں ہوجاتی  ہے  بلکہ  بحیثیتِ  مسلمان  اور خیرِ امت  ہونے  کہ ان  کے  ذمہ اور  بھی کام  ہیں ۔

وہ  یہ  ہیں:


3۔اپنی اولاد  کی دینی اور  روحانی تربیت:ماں  باپ  پر  یہ لازم  ہے  کہ وہ اپنی اولاد کی دینی تربیت  سے ذرا  بھی غفلت  نہ  برتیں۔یہ جو  بچیں آپ کی گودوں  میں ہیں یہ اللہ تعالیٰ  کے  بندے  ہیں ، اس  لیے  یہ آپ کی ذمہ داری ہے کہ آپ  ان کو اللہ تعالیٰ  کا نیک بندہ  بنائیں۔مائیں اپنی اولاد  کا کتنا خیال کرتی ہیں ، ان کو  نہلاتی  ہیں ، ان  سے گندگی دور  کرتی  ہیں ، ان کو  پاؤڈر اور خوشبو  لگاتی ہیں  ،اچھے کپڑے  پہناتی  ہیں   تاکہ لوگ اس  کے بچے کو  دیکھیں تو  اس  کے بچے کو   پسند کریں ، اس  سے  محبت  کریں۔

          آپ اپنی اولاد  کو  بھی  برائیوں سے پاک  کرنے  کا اہتمام کریں ، ایمان    کا پاؤڈر ان  کو لگائیں ، اعمالِ صالحہ  کی خوشبو  سے ان  کو مہکائیں اور  تقوی  کا لباس  اس  کو پہنائیں  تاکہ آپ  کی اولاد اللہ کو اچھی  لگے  اس  پر اللہ کو پیار آجائے ، اس  سے اس  کے آقا ﷺ  خوش  ہوجائیں۔


4۔مقصدِ زندگی  کی   تربیت: آپ  کی گود میں  جو  بچے  ہیں  وہ صرف  مسلمان  نہیں  ہیں  بلکہ وہ آخری اور عالمی بنی سیدنا محمدﷺ  کی امت  کے افراد  ہیں ، وہ خیرِامت کا حصہ  ہیں ، ان کا نصب العین  عدل و انصاف  کا بول بالا ہے ۔لہذا یہ آپ کی ذمہ داری ہے کہ آپ  ان کو اس قابل  بنائیں اور ان  کی ایسی تربیت  کریں  کہ وہ اس ذمہ داری  کو ادا کرنے  کے قابل ہوجائیں۔ان کے اندر آپ  مقصد زندگی کا  شعور پیدا کریں ، ان  کے  دلوں میں اللہ تعالیٰ  سے شدید  محبت پیدا  کریں،اپنے  بنی ﷺ  کی اتباع  کا شدید  جذبہ ان کے اندر ابھاریں۔ان  کے تعلیم  و تربیت ایسی کریں اور ان  کا مزاج ایسا بنائیں  وہ اپنے رب  کو مخاطب  کرکے پکار اٹھیں:

’’مری زندگی  کا مقصد تری دیں  کی سرفرازی

میں                                                                       اسی  لیے مسلماں میں                                              اسی  لیے                            نمازی‘‘


ماں  کی تربیت  کا اثر  اولاد  پر:

       دین  و  ملت  کے  لیے جن علماء  نے اور مصلحین  نے  قربانیان  دی  ہیں اور دین  کی اور مسلمانوں کی بڑی خدمت کی ہے ان  کی اس تربیت میں ان  کی ماؤں  نے بڑا  کردار  ادا کیا ہے ۔


۱۔امام ربیعۃ الرائے:               حضرت ربیعۃ الرائے اور انکی والدہ کی تعلیم و تربیت میں بے مثال قربانی

امام مالک ؒ فرمایا کرتے تھے۔ کہ علم حدیث میں کمال اس وقت پیدا ہوسکتا ہے کہ آدمی ناداری اور فقر فاقہ کا مزہ چھکے۔مثال میں اپنے استاد ربیعۃ الرائے کا حال بیان کرتے تھے۔کہ علم کی جستجو میں گھر کی چھت کی کڑیا ں تک ان کو بیچنی پڑیں۔ اور مدینہ منورہ کے امام بن گئے۔ انکی پیدائش کا واقعہ بڑا حیرت انگیز ہے۔ انکے والد عبدالرحمن فروخ ؒ تھے۔ انہوں نے شادی کی اور جہاد فی سبیل اللہ کے لئے آرمینیا اور آذر بائی جان کی طرف نکلے۔اور مسلسل ۲۸ سال تک گھر واپس نہ آسکے۔ اور نہ گھر سے کوئی رابطہ رکھا۔ جب آپ جانے لگے تو آپکی بیوی کو حمل تھا۔ ۲۸ سال کے بعد واپسی ہوئی۔ راستے میں سوچ رہے تھے کہ نہ معلوم میری بیوی زندہ ہو گی یا فوت ہو گئی ہو گی۔ بچی پیدا ہوئی ہو گی یا بچہ پیدا ہوا ہو گا۔ پھر وہ زندہ ہو گا یا مر گیا ہوگا۔ انہی خیالات کیساتھ مدینہ منورہ میں عشاء کے بعد داخل ہو گئے اپنے مکا ن میں گئے مکان کا نقشہ تبدیل ہو چکا تھا جہادی وردی میں تھے ہتھیار سے مسلح تھے۔ نیزے کی نوک سے دروازہ کھولا .اندر گئے۔ حیرت میں ڈوبے ہوئے تھے۔کہ گھر تو میرا لگ رہا ہے۔ مگر اس میں دوسری منزل بھی بن چکی ہے۔ اندر سے ایک نوجوان نکلا۔ حضرت فروخ نے فرمایا اللہ کے دشمن !میرے گھر پر آپنے قبضہ کیا ہے اور مجھے مردہ سمجھا ہے اس نوجوان نے جواب میں فرمایا کہ اللہ کے بندے ہمارے گھر میں بغیر اجازت کے کیوں گھس کر آرہا ہے۔میں قاضی وقت کو بتلاؤ نگا۔کمرے سے ایک بوڑھی خاتون نکل آئی۔ پہلے تو اس پر سکتہ تاری ہو گیا۔ پھر فرمایا بیٹے یہ تو آپکے ابو ہیں. پھر تو بیٹے اور باپ کے درمیان معانقہ شروع ہوا۔ دونوں گلے مل گئے اور روئے لوگ بھی اکٹھے ہو گئے کمرے میں گئے فروخ نے اپنی اہلیہ سے فرمایا کہ میں نے جاتے ہوئے آپکو تیس ہزار روپیہ دیا تھا۔ جواب میں اہلیہ نے فرمایا وہ محفوظ ہے آپ آرام فرمائیں۔ صبح انکا بچہ پہلے مسجد نبوی ﷺ میں پہنچ گیا۔ حضرت فروخ بعد میں گئے نماز ہو گئی. حضرت فروخ رسول پاک ﷺ کے سلام کے لئے روضۂ اقدس پر گئے۔ واپس آگئے۔ تو مسجد نبوی ﷺ میں حدیث پاک کا درس ہو رہا تھا وہ بھی پیچھے بیٹھ گئے۔ حضرت فروخ نے اپنے ساتھ ایک بیٹھنے والے سے پوچھا کہ یہ بزرگ کون ہیں۔جو درس دے رہے ہیں۔چونکہ درس دینے والے کے پیچھے آپ بیٹھے تھے۔ تو اس بندے نے کہا کہ آپ اس کو نہیں جانتے۔ یہ تو مدینہ منورہ کا سب سے بڑا بزرگ اور محدث ہے۔ یہ اس بزرگ کا بیٹا ہے جو ۲۸ سال کے بعد سنا ہے کہ رات کو واپس پہنچ چکے ہیں۔ فرمایا رات کو تو میں آیا تھا۔ حضرت فروخ کی خوشی کی انتہا نہ تھی۔ گھر جا کر اہلیہ کو مبارک باد دی کہ یقیناًآپ نے بیٹے کے اوپر محنت کی ہے۔اس نے جواب میں فرمایا کہ وہ تیس ہزار روپیہ اسکی تعلیم و تربیت پر خرچ کر چکی ہوں۔ فرمایا اللہ پاک جزاء خیر دے۔ پیسہ اپنی جگہ پر لگایا ہے۔یہ تھے ربیعۃ الرائے جو مدینہ کے سب سے بڑے عالم تھے۔  (جامع بیان العلم از علامہ ابن عبدالبر ج ۱ صفحہ ۹۷)

فائدہ :۔ یہ تھیں نیک خواتین کہ سارا پیسہ اپنے بیٹے کی تعلیم و تربیت پر خرچ کر دیا اور بیٹے کو اللہ پاک نے اتنا بڑا عالم بنا دیا۔ کہ امام مالک کے استاد بن گئے۔ اور حدیث کے امام بن گئے۔ کیا ہماری خواتین میں دین و علم کا ایسا جذبہ موجود ہے۔

۲۔شیخ عبدالقادر  جیلانی :آپ  اللہ کے  بڑے  نیک   بندے  گزرے  ہیں  آپ  کے ذریعہ  سے اللہ تعالیٰ  نے کئی لوگوں  کو  ہدایت  دی  ، کئی لوگوں  نے آپ  سے  اللہ  کی محبت  کو  سیکھا ۔آپ  کی تربیت  میں آپ کی والدہ  کا بڑا  کردار ہے۔آپ چودہ برس کی عمر میں اعلیٰ تعلیم کے لیے ایک قافلہ کے ساتھ بغداد کو روانہ ہوئے والدہ محترمہ نے آپ کی گدڑ ی میں چالیس اشرفیاں رکھ کر اس مقصد کے لیے سی دیں کہ حفاظت رہے اور ضرورت کے وقت کام آ سکیں بد قسمتی سے راستے میں ڈاکہ پڑا۔ جو شے جس کے ہاتھ آئی ڈاکوئوں نے اس سے بڑی بے دردی سے چھین لی۔ داکوئوں نے آپ سے پوچھا تمہارے پاس کیا ہے؟ آپ نے کہا چالیس اشرفیاں ڈاکو سمجھے آپنے ہم سے مذاق کیا ہے چنانچہ آپ کو اپنے سردار احمد الفی کے پاس لے گئے اور ماجرا بیان کیا سردار نے بھی آپ سے یہی پوچھا اور آپ نے اسے بھی یہی جواب دیا۔ اس نے کہا اچھا لائو دکھائو تو وہ چالیس اشرفیاں کہاں ہیں۔ آپ نے گدڑی ادھیڑی اور اشرفیاں نکال کے ان کے سامنے رکھ دیں۔ ڈاکو بہت حیران ہوئے۔ سردار نے کہا اے لڑکے تو نے ایسی چھپی ہوئی چیز جو ہزار کوششوں کے باوجود بھی ہمارے ہاتھ نہ آ سکتی تھی کیوں ظاہر کر دی آپ نے جواب دیا میں تعلیم کی غرض سے بغداد جا رہا ہوں یہ اشرفیاں میری والدہ نے سفر کے خرچ کے لیے میری گدڑی میں رکھی تھیں لیکن اس کے ساتھ ساتھ اس بات کی بڑی شدت سے تاکید کی کہ سچ کو کسی صورت میں بھی ہاتھ سے نہ جانے دینا ہمیشہ سچ بولنا ڈا کوئوں کے دل پر آپ کی بات نے کچھ ایسا اثر کیا کہ فوراً ڈکیتی سے توبہ کر کے پارسائی اختیار کر لی۔ یہاں تک کہ یہ لوگ چوروں اور ڈاکوئوں کی صف سے نکل کر اللہ کے دوستوں میں شمار ہوئے۔


۳۔شیخ  معین الدینؒ: آپ  کے  ذریعہ  سے ہندوستان میں بہت  سے مشرکوں  کو  ہدایت  ملی، کئی مسلمانوں  نے آپ   کے  ہاتھ  پر گناہوں  سے  توبہ  کی۔آپ  کی والدہ  کی خاص  تربیت آپ  کو  حاصل  رہی ،آپ کی والدہ  نے  کبھی آپ  کو  بے وضو  دودھ  نہیں پلایا۔


۴۔حضرت خواجہ قطب الدین بختیار کاکی                       ؒ:                                                                            حضرت خواجہ قطب الدین بختیار کاکی رحمتہ اللہ علیہ آج بھی قطب مینار کے قریب لیٹے ہوئے ہیں ان کے بارے میں بھی مشہور واقعہ ہے ان کے نام کے ساتھ قطب الدین بختیار کاکی کا لفظ لگایا جاتا ہے یہ ہندی لفظ ہے اس کا معنی روٹی ' واقعہ یہ ہے که جب یہ پیدا ہوئے تو ان کے والدین بیٹھے ہوئے آپس میں مشورہ کر رہے تھے' ہمارا بیٹا نیک کیسے بنے؟ اچھا کیسے بنے؟ چنانچہ ان کی ماں نے کہا میرے ذہن میں ایک تجویز ہے کل سے میں تجویز پر عمل کروں گی' دن جب بچہ مدرسہ میں چلا گیا ماں نے کھانا بنایا اور الماری میں کہیں چھپا کر رکھ دیا' بچہ آیا کہنے لگا امی بھوک لگی ہے مجھے کھانا دے دیجئے۔ ماں نے کہا بیٹا! ہمیں بھی تو کھانا اللہ تعالیٰ ہی دیتے ہیں وہی رازق ہیں وہی رزق پہنچاتے ہیں وہی مالک و خالق ہیں' ماں نے اللہ رب العزت کا تعارف کروایا او رکہا کہ بیٹا تمہارا رزق بھی وہی بھیجتے ہیں تم اللہ سے مانگو بیٹے نے کہا امی کیسے مانگوں؟ ماں نے کہا کہ بیٹا مصلیٰ بچھاؤ' چنانچہ مصلی بچھایا بیٹا التحیات کی شکل میں بیٹھ گیا۔ چھوٹے چھوٹے معصوم ہاتھ اٹھائے۔ ماں نے کہا کہ بیٹا دعا کرو' بیٹا دعا کر رہا ہے کہ اللہ تعالی مدرسہ سے آیا ہوں بھوک لگی ہے اللہ مجھے کھانا دیجئے۔ بیٹے نے تھوڑی دیر اس طرح عاجزی کی پوچھنے لگا' امی اب کیا کروں؟ ماں نے کہا کہ بیٹا تم ڈھونڈو اللہ نے کھانا بھیج دیا ہو گا۔ تھوڑی دیر کمرے میں ڈھونڈا بالآخر الماری میں کھانا مل گیا ' بیٹے نے کھانا کھایا ۔ اب بیٹے کے دل میں ایک خیال پیدا ہوا وہ روز اللہ تعالی کی باتیں پوچھتا امی وہ سب کو کھانا دیتے ہیں پرندوں کو بھی ' حیوانوں کو بھی پتہ ن ہیں اس

وہ اللہ تعالی کے بارے میں زیادہ معلومات حاصل کرنے کی کوشش کرتا۔ وہ محبت سے اللہ تعالی کا نام لیتا وہ سونے سے پہلے والدہ سے اللہ تعالی کی باتیں پوچھتا' ماں خوش ہوتیں کہ میرے بیٹے کے دل میں اللہ تعالی کی محبت بس رہی ہے۔

کچھ دن تک سلسلہ                    اسی طرح چلتا رہا مگر ایک دن ایسا ہوا کہ ماں اپنے رشتہ داروں میں کسی کے ہاں چلی گئی جب خیال تو پتہ چلا کہ بچے کے آنے کا وقت گزر چکا ہے ماں نے برقعہ لیا اور تیز قدموں سے چل دیں اور راستے میں دعائیں بھی کرتی رہی کہ میرے مالک میں نے تو اپنے بچے کا یقین بنانے کیلئے یہ  سارا معاملہ کیا تھا اے اللہ اگر آج میرے بچے کا یقین ٹوٹ گیا تو میری محنت ضائع ہو جائے گی۔ اے اللہ پردہ رکھ لینا۔ اللہ میری محنت کو ضائع ہونے سے بچا لینا۔ ماں دعائیں کرتی آ رہی ہے جب گھر پہنچی تو دیکھ کہ بیٹا آرام کی نیند سو رہا ہے۔ ماں نے جلدی سے کھانا پکایا اور چھپا کر رکھ دیا۔ ماں نے بیٹے کو جگایا اور پوچھا کہ آج تجھے بھوک نہیں لگی تو بچه کہنے لگا مجھے تو بھوک نہیں لگی ماں نے پوچھا وہ کیسے؟ تو بچے نے کہا کہ جب میں مدرسہ سے آیا تو میں نے مصلیٰ بچھایا اور میں نے دعا مانگی اے اللہ بھوک لگی ہوئی  نہیں ہے اللہ مجھے کھانا دے دو اس کے بعد میں نے کمرے میں تلاش کیا مجھے ایک جگہ روٹی پڑی ہوئی ملی امی میں نے اسے کھا لیا مگر جو مزہ آج آیا ایسا مزہ پہلے کبھی نہیں آیا تھا۔ مائیں بچوں کی تربیت ایسے کیا کرتی تھیں اور اللہ رب العزت نے ان کو پھر قطب الدین بختیار کاکی بنا دیا چنانچہ یہ  بادشاہوں کے شیخ بنے اور اپنے وقت میں لاکھوں انسان ان کے مرید بنے تو ایک اور کامیاب شخصیت کے پیچھے آپ کو عورت کا کردار ماں کی شکل میں نظر آئے گا۔


۵۔مولانا محمد علی جوہر: آپ  بڑے  نیک ، اعلی ٰ  تعلیم  یافتہ  تھے ۔ ہندوستان  میں  تحریک آزادی  کے  علمبرداروں میں  سے  تھے ،آپ  نے  انگلینڈ  جاکر وہاں  کے انگریزی اخباروں  میں ہندوستان  کی آزادی کی آواز  بلند کی تھی۔کئی بار آپ کو  جیل  جانا پڑا۔آپ  تحریک خلافت  کے روحِ رواں  تھے ، آپ  کی تعلیم  و  تربیت  میں آپ  کی والدہ  کا اہم کردار  رہا ، وہ خود  آزادی اور خلافت تحریک کی رہنما تھیں۔ان  ہی کے بارے میں یہ شعر  سارے  ہندوستان میں مشہور ہوگیا تھا:

بولی                                                                                                              امّاں                                                                               ‘                                                           محمد علی                                                                                              کی :                                                                                                                                                       ’’جان                                                                 بیٹا                                                                                              خلافت                                                                            پہ                                                                                                دے                                            دو

ساتھ  تیرے  ہیں شوکت  علی بھی ، جان بیٹا  خلافت  پہ  دے  دو‘‘

الغرض  دنیا  میں جن افراد  نے  بھی کوئی انقلابی کارنامہ  انجام  دیا  ہے  ، ان  کے پیچھے ان کی ماؤں  کی تربیت  کا اہم کردار رہا  ہے ، اسی  وجہ  سے  نیپولن  نے  کہا  تھا : ’’  تم  مجھے اچھی مائیں  دو  میں  تم  کو  بہترین  قوم  دونگا۔‘‘


آج  کے  دور  میں  مسلم ماؤں  کا کرداراور ان  کی ذمہ داریاں:

          آج  کے  جو  حالات  ہیں  ان سے آپ  ناواقف  نہیں، آج  کے دور  میں  ایسے  کثیر  افراد  کی ضرورت  ہیں  جو  اللہ  کے  نیک  بندے  ہوں اور  ان  کے اندر  اپنے مقصد  کا شعور  ہو ، خیرِامت  کی ذمہ داریوں  کو  وہ اٹھا نے  کہ وہ  قابل  ہوں ، مسلمانوں  کو  وہ اپنا کھویا ہوا مقام  دلا سکیں۔اس  لیے  امت  کی ماؤں کی یہ ذمہ داری  ہے کہ وہ  اپنی اولاد  کی ایسی تربیت  کریں ،ان  کے اندر  مقصد  کا  شعور  پیدا کریں ، مطلوبہ صلاحیتوں  کو ان  کے  پیدا  کرنے اور  ان  کو  پروان چڑھانے   کی فکر  کریں۔

          اس  سلسلے  میں  سب  سے  پہلا  کام  تو یہ ہے کہ ہمارے  اندر اپنے  مقصد  کا شعور  ہو  ، دین  کی نصرت  اور حمایت  ہماری  زندگی  کا مقصد اور ہمارا نصب  العین  ہو اور ہم اپنی اولا  د  کی ایسی تربیت  کے  لیے آمادہ  ہوں ، اگر  ہمارے اندر ان کی تربیت  کاشدید  جذبہ  اور  ہمارے ذہن  میں اس  کا صحیح منصوبہ  نہ  ہو بلکہ ہم  کسی اور وجہ  سے  اس  پر آمادہ  ہوجائیں تو  ہم اس  تربیت  کا صحیح حق ادا  نہیں کرسکتے ۔اس   لیے  یہ وقت کا تقاضہ  اور آپ  کہ ذمہ داری  ہےکہ آپ اپنے آپ  کو اس  عظیم  کام  کے  لیے  آمادہ  کرلیں۔


اولاد  کی تربیت  کے  اہم اصول


1.جسمانی  تربیت:

۱۔اچھی  غذا  دیں :

        بچوں  کی  جسمانی  تربیت  کا  یہ  پہلا  اصول  ہے  کہ  ان  کا اچھی غذا دی جائے ، ایسی  غذاؤں   سے  بچا  جائے  جو  ان  کو  نقصان  پہنچاسکتی  ہوں۔بسا اوقات  میٹھا  اور  چاکلیٹ  کھانے  کی وجہ  سے بچوں  کے  دانتوں  کو  نقصان  پہنچتا  ہے  یہ  والدین  کی ذمہ داری    ہے کہ وہ  ایسی  چیزوں   سے  اپنی  اولاد  کی حفاظت  کریں۔ باہر   کے  کھانوں  کی  وجہ  سے  بھی بچوں  کی  طبیعت  پر  منفی  اثرات  پڑتے  ہیں  ، مگر  افسوس  آج  کل  اس  سلسلے  میں  بڑی  غفلت  برتی  جارہی  ہے ۔

          ماں  کی  یہ  ذمہ  داری   تو  اسی  وقت  سے شروع ہوجاتی  ہے  جب  کہ  ابھی بچہ  ماں  کے  پیٹ  میں  ہے  ، ماں  کو  اس  وقت  خاص  طور  سے کھانے  میں  احتیاط  کرنے  کی ضرورت   ہے۔  اس  سلسلے  میں  بے  احتیاطی  بسا  اوقات  بچوں میں  مستقل  جسمانی  کمزوریوں کا  سبب  بن جاتی  ہیں۔


۲۔صحیح  نیند  کا  انتظام  کریں :

          صحیح  اور  وقت  پر  نیند  نہ  ہونی  کی وجہ  سے  بھی  بچو ں کی  طبیعت   پر  برا   اثر  پڑتا  ہے  ،  اس  لیے  ماں  کی  یہ  ذمہ  داری  ہے کہ  وہ  بچوں  کی نیند  کی صحیح  ترتیب  بنائیں ، نیند  صحیح  نہ  ہونے   کی وجہ  سے  بچوں کی  نشونما    رک   جاتی  ہے۔


(2) زندگی  گزارنے  کی  تربیت:

۱۔زندگی  گزارنے  کی  تربیت:

          اولاد   کی  تربیت  کا   یہ  اہم  پہلو  ہے  کہ انھیں  زندگی  گزارنے  کا  فائدہ  مند  طریقہ  سکھائیں ، ایسی  مہارتیں  اور  صلاحتیں  ان  میں پروان  چڑھائیں  جو  ان  کو  زندگی  گزارنے  میں معاون  و  مددگاثابت  ہوں ۔


۲۔  عصری  علوم  و  فنون   کی تربیت:

            اس  زمانے  میں  وہی  قوم ترقی   کرسکتی  ہے  جو  علم  اور  ٹکنالوجی  کے  میدان  میں      آگے  رہے ۔ اس  لیے  یہ  ہماری  اہم  ترین  ذمہ داری  ہے  کہ  ہم اس  سلسلے  مین  خصوصی  توجہ  ی دیں۔

’’ترقیوں  کے  دور  میں  اسی  کا زور   چل  گیا

بنا                                                          کے                               اپنا                                                                  راستہ                                                             جو  بھیڑ   سے  نکل                               گیا‘‘


(3)  بچوں  کی دینی  تربیت:

۱۔خود  دین دار  بنیں:

          ایک  ماں  جو اپنے  اولاد  کی دینی ،   روحانی  اور  مقصد  زندگی  کے شعور  کی تربیت    کرنا  چاہتی  ہے  اس  لیے  ضروری  ہے کہ  وہ  پہلے  اپنے  آپ   کو  ان صفات  ک حامل  بنائے ، یاد  رکھیے  بچے  نصیحت اور  باتوں  سے  اتنا  نہیں  سیکھتے  جتنا کہ وہ  اپنے  بڑوں  کو  دیکھ  کر  سیکھتے  ہیں۔ اگر  ماں  باپ  ہی  دین  دار  نہیں ، ان  کو خود  مقصد ِ  زندگی کا شعور  نہیں   وہ  ہر  گز    اپنی  اولاد  کی تربیت  میں کامیاب  نہیں  ہو  سکتے۔

          بچے پر والدین کے اثرات ماں باپ اگر نیک ہوں گے تو اولاد کے اندر ضرور بالضرور نیکی کا جذبہ ہوگا یقینا اثرات ہوں گے ماں باپ کے اس کے جین میں وہ اثرات ہوتے ہیں۔ ماں باپ متقی ہوں گے تو اس کی اولاد کے دلوں کے اندر یقینا خیر ہوگی۔

          گر تو ماں باپ فسق و فجور کا وقت گزارنے والے ہیں تو بچے کے اندر اس کے اثرات آجاتے ہیں۔ اور اگر ماں باپ نیک ہوتے ہیں بچے کے اندر نیکی کے اثرات آجاتے ہیں ۔ سائنس کی دنیا نے تو آج مان لیا ۔ (Genetic) میں بچے کی ماں کے اثرات نظر آتے ہیں ۔ اس کو بی ہیومیٹرل اسپیکٹ آف ڈی۔ این اے کہتے ہیں کہ بچے کے DNA کے اندر ماں باپ کی طرف سے حیا، بہادری ، شرم اور اچھے اخلاق منتقل ہوتے ہیں ۔ اس کو سائنس کی دنیا میں کہتے ہیں Behavioural Espect of DNA تو ماں باپ کے اندر اگر نیکی ہوگی اور ماں باپ نیکی کا خیال کریں گے اور اللہ سے ڈرنے والے ، مانگنے والے ہوں گے تو پھر بچے کے DNA میں بھی یہی اثرات آئیں گے۔ یہ بات یاد رکھنا کہ جب باپ علی المرتضیٰ ہوتا ہے اور ماں فاطمتہ الزہرا ہوتی ہے اور پھر بیٹے حسن اور حسین جنت کے سردار بنا کرتے ہیں ۔ جب باپ ابراہیم اور  ماں  ہاجرہ ہو  تو  پھر  بیٹا  اسمعیل بنتا  ہے۔

۲۔دودھ پلاتے وقت  ، یا بچوں کے لیے کھانا تیار  کرتے وقت  ذکر  کریں، با رضو  رہنے کی کوشش کریں :

  جو عور تیں ایام عمل میں نماز پڑھتی ہیں ، نیکی کرتی ہیں، سچ بولتی ہیں، کسی کا دل نہیں دکھاتی ، اللہ تعالیٰ کو راضی کرتی ہیں ، نیک کام کرتی ہیں ان تمام چیزوں کےاثرات ان کے بچوں پر پڑتے ہیں ۔ اور جب بچے کی ولادت ہوئی تو ماں اب بچے کو جو دودھ پلا رہی ہے تو اس کے بھی اثرات ہوتے ہیں ۔ پہلے ماں کے جسم سے خوراک لے رہا تھا اس کے اثرات تھے ، اب دودھ لے رہا ہے اس کے اثرات ہیں۔ آج کل تو ویسے ہی ڈیوں کا دودھ آ گیا ۔ کیا پتہ کس کا دودھ ہے۔ تو جانوروں کا دودھ پی کر جانوروں والی عادتیں آجاتی ہیں۔ عورت کو ہر ممکن کوشش کرنی چاہیے کہ بچے کو اپنا دودھ پلائے اگر چہ تھوڑا ہو۔ ہاں دودھ کی کمی پوری کرنے کیلئے اور پلانا پڑے تو اور بات ہے۔ مگر کچھ عورتیں اس سے بھاگتی ہیں۔ اب بتائیں کہ ماں کے دودھ کی برکتیں اس بچے کے اندر کیسے آئیں گی۔ ہمارے اسلاف میں جب بچوں کی پرورش کا وقت ہوتا تھا تو مائیں اپنے بچوں کو باوضو ر دودھ پلایا کرتی تھیں۔ بچہ دودھ پیتا تھا ، مائیں بیٹھ کر اللہ تعالی کا ذکر کرتی تھیں ۔ تو بچے کے جسم میں دودھ جانا تھا اور بچے کے دل میں نور جایا کرتا تھا۔

۳۔  بچوں  کو  توحیداور اللہ  کی  محبت  سکھائیں:

          بچوں کا  یہ بنیادی  اور  دینی حق  ہے  کہ ان  کو  توحید  سکھلائی  جائے ، اللہ تعالیٰ  کی قدرت ، اس  کی عظمت  ،  اس  کی رحمت    بچوں   کو  سمجھائی  جائیں۔حضرت لقمان  کی نصیحت  جو  انھوں  نے  اپنے  لڑکے  کو  کی  ہے  بڑی  اہمیت  کی حامل  ہے  ، اس کی اہمیت  کا اندازہ آپ  اس   بات  سے لگائیے کہ اللہ تعالیٰ  نے  اس  کو  قرآنِ  مجید  میں  نقل کیا ہے  ، آپ  نے  اپنے  لڑکے  کو  نصیحت  کی تھی :

وَ اِذْ قَالَ لُقْمٰنُ لِابْنِهٖ وَ هُوَ یَعِظُهٗ یٰبُنَیَّ لَا تُشْرِكْ بِاللّٰهِﳳ-اِنَّ الشِّرْكَ لَظُلْمٌ عَظِیْمٌ (  سورہ  لقمان :13)

ترجمہ :’’اور یاد کرو جب لقمان نے اپنے بیٹے سے کہا اور وہ نصیحت کرتا تھا اے میرے بیٹے اللہ کا کسی کو شریک نہ کرنا ۔ بےشک شرک بڑا ظلم ہے۔‘‘

حدیث :          حضور اکرم صلى الله عليه وسلم حضرت عبداللہ ابن عباس رضى الله تعالى عنه کو بچپن میں تعلیم فرماتے ہیں ”اے بچے! خدا کو یاد رکھ تو اس کو اپنے سامنے پائے گا، اور جب تو سوال کرے تو اللہ ہی سے سوال کر اور جب تو مدد چاہے تو اللہ ہی سے مدد مانگ اور جان لے اس بات کو کہ اگر تمام لوگ اس بات پر اتفاق کرلیں کہ تجھ کو کچھ نفع پہنچانا چاہیں تو ہرگز اس کے سوا کچھ نفع نہیں پہنچاسکتے جو کہ اللہ تعالیٰ نے تیرے واسطے لکھ دیا ہے اور اگر سب لوگ اس پر متفق ہوجائیں کہ تجھے کچھ نقصان پہنچانا چاہیں تو ہرگز اس کے سوا کوئی نقصان نہیں پہنچاسکتے جو اللہ نے تیرے واسطے لکھ دیا ہے۔(مشکوٰة شریف،ص:۴۵۳)

۴۔اخلاق  و  ادب   کی  تربیت

          اولاد  کی تربیت  کا  یہ  بھی  اہم  پہلو  ہے  کہ اولاد  کو  اخلاق  و  آدا  کی  تربیت  دی  جائے۔ادب  سکھلانے  کی  اہمیت    کو  بتلاتے  ہوئے اللہ  کے  نبی  ﷺ   نے  ارشاد  فرمایا :

’’مَا نَحَلَ وَالِدٌ وَلَدًا مِنْ نَحْلٍ أَفْضَلَ مِنْ أَدَبٍ حَسَنٍ‘‘

ترجمہ :’’                کسی   باپ  نے  اپنی  اولاد کو  اچھے  ادب   سے  بڑھ  کر  کوئی       تحفہ  نہیں   دیا ۔‘‘

حضرتِ  لقمان نے اپنے صاحب زادے  کو  چند  برے  اخلاق  سے  منع  کرتے  ہوئے  فرما یا تھا ۔

 وَ لَا تُصَعِّرْ خَدَّكَ لِلنَّاسِ وَ لَا تَمْشِ فِی الْاَرْضِ مَرَحًاؕ-      اِنَّ اللّٰهَ لَا یُحِبُّ كُلَّ مُخْتَالٍ فَخُوْر o

وَ اقْصِدْ فِیْ مَشْیِكَ وَ اغْضُضْ مِنْ صَوْتِكَؕ-اِنَّ اَنْكَرَ الْاَصْوَاتِ لَصَوْتُ الْحَمِیْرِ o ( لقمان : (18,19

ترجمہ : ’’لوگوں سے اپنا رُخ نہ پھیر لیا کرو اور نہ زمین میں اترا کر چلو، بے شک اللہ تکبر کرنے والے اور اترانے والے کو پسند نہیں فرماتے ،اپنی چال میں میانہ روی اختیار کرو اور اپنی آواز کو پست رکھو کہ سب سے بری آواز گدھے کی آواز ہے۔‘‘

                              اس آیت  سے  معلوم  ہوتا  ہے  کہ  ماں  باپ  کو  اپنی  اولاد  کے  ظاہری  اور  باطنی  اخلاق   کی  تربیت  کرنی    ہے۔دل  میں  انسانیت  کا  احترام  ہو  ،  ان کی حقارت  نہ  ہو، دل  میں  تکبر  کے  جذبات  نہ ہوں ،  اترانے  والی  چال  نہ  ہو،  لوگوں  سے  بات  کرنے  کا سلیقہ  ہو۔گفتگو  کا  انداز  سنجیدہ  ہو  ، بازاروں  میں ،  گلیوں  میں آوارہ   لڑکوں  کی طرح  چیخ   و  پکار  کرنے  والا  نہ  ہو۔

۵۔  اپنے  بچوں    کے دل  میں اللہ  کے  رسول ﷺ  کی  اور  آپ  کے اصحاب  کی محبت  بسائیں:

           ایک    مسلمان  اس  وقت  تک اللہ تعالیٰ  کا  نیک  بندہ نہیں    بن  سکتا  جب  تک  کہ اللہ     کے  رسول  ﷺ  اس کے  نزدیک دنیا   کہ  ہر  فرد  ، اس  کے  ماں  پاب  ، اولاد   بلکہ  خود  اس  کی اپنی  جان  سے  زیادہ  محبوب  نہ  ہوجائیں۔اس  لیے  آ پ  اپنی  اولاد  کو  اللہ  کے  نبی  ﷺ  کی محبت  سکھائیے، آپ  ﷺ  کے  امت  پر  احسانات  ، آپ  کے  بلند اخلاق  ،  اعلیٰ  کردار   سے  اپنی  اولاد  کو  واقف  کرائیے،درود  شریف  کا   اہتمام  کرائیے۔

           آپ  ﷺ  کی محبت  کا  لازمی  تقاضہ  آپ  ﷺ  کے  صحابہ کرام   سے  محبت    ہے  ، کیونکہ  یہی  وہ  مبارک  جماعت  ہے  جس  نے اللہ  کے  محبوب  ﷺ              کی حفاظت  لے  لیے اپنی جانوں  تک  کی پرواہ  نہیں  کی ، اور  آپ  کے  بعد  آپ  کے  مشن  کو  لے کر  دنیا  میں پھیل  گئی ۔آپ  اپنی  اولاد  کو  ان  کے  واقعات  سنائیے ، اللہ  کے  نبی  ﷺ  سے انھوں  سے  کیسی  سچی  محبت  کی  وہ  بتلائیے، دین ِ اسلام  کے  لیے اس  حضرات   نے  کیسی  قربانیاں  دیں  ،اس  کا  تذکرہ  کیجیے ،اس  سے آپ  کی اولاد  میں  ان  جیسا  بننے  کی تمنا اور  آرزو  پیدا ہوگی۔

(۴)مقصد ِ  زندگی   کی تربیت

۱۔ مقصدِ  زندگی  کا  شعور  پیدا  کریں:

          آپ   جن  بچوں  کی  تربیت  کررہیں  ہیں  وہ  صرف  مسلمان  ہی  نہیں  بلکہ عالمی  اورآخری  پیغمبر  حضرت  محمد ﷺ  کی امت  کے    افراد  ہیں  ،امت  ِ  مسلمہ  کا  قیمتی  سرمایہ  ہیں ،  قوم  کی طاقت  ہیں ۔اس  لیے  یہ  آپ  کی اہم  ترین  ذمہ  داری  ہے  کہ آپ  ان  میں  مقصد ِ  زندگی کا شعور  پیدا  کریں ،ان  کو  اپنے  فرضِ  منصبی   سے  آگاہ  کریں ۔

۲۔ان   کا  داعیانہ  مزاج  بنائیں :

          صرف   مقصدِ  زندگی  کا  شعور  کا فی  نہیں ، جب  تک  خود ان  کے اندرون  میں ایک  طاقت  ور محرک  نہیں  ہوگا    جو  ان  کو  امت  لیے  کچھ  کرنے  پر  آمادہ  کرے  اس  وقت  تک  ان  سے  کسی  کام  کی توقع  نہیں کی  جاسکتی ، اس  کے لیے ضروری  ہے  کہ  ہم  ان  کا  داعیانہ  مزاج  بنائیں،ان  کو  داعیوں  کی قربانیوں  کے  واقعات  سنائیں۔  داعیانِ اسلام  میں  سب  سے  پہلے  انبیاء  علیھم السلام  کے  واقعات  ، اللہ  کے   نبی ﷺ  کی سیرت ِ  مبارکہ  ، صحابہ  کرام  کی  دین  کے  لیے  جدو جہد اور  قربانیوں کے  واقعات ،ہرزمانے  کے  مختلف  داعیوں  کے  واقعات۔

          ان  سے  ان  کے  سینے   میں    دین  و  ملت  کے  لیے  کچھ  کرنے  کا  احساس  پیدا  ہوگا،  یہ احساس  پھر  ان  کا جذبہ  بن  جائے  گا اور یہی جذبہ  جب  مضبوط  ہوگا  تو  ان  کو  کام  پر  لگائے  گا۔

۳۔ان  کے  اندراس   مقصد  کے  حصول  کے  لیے درکار صلاحیتیں پیدا  کریں :

           کسی  کا  مقصد  کا  کتنا  ہی  شعور  ہو  اور  اس  کام  کا  کتنا  ہی  جذبہ  ہو  ، لیکن  اگر  اس  کام  کے   لیے  جن  صلاحیتوں  کی ضرورت  ہے  وہ صلاحتیں  نہ  ہو  تو  پھر  صرف  جذبات   کام نہیں  آتے ، اس  لیے  یہ  آپ  کی ذمہ  داری  ہے  کہ آپ  ان  کے اندر  وہ  صلاحتیں  پیدا  کریں  ،  جو  مقصد  کے  حصول  کے  لیے  ضروری  ہیں۔

bottom of page